29

کشمیر پر حملہ ہو تو ہمارے وزیراعظم کا جواب ہوتا ہے ”میں کیا کروں”، بلاول بھٹو

حویلی: پاکستان پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری کا کہنا ہے کہ پاکستان کا وزیراعظم نالائق ، نا اہل اور نا جائز ہے۔

حویلی آزاد کشمیر میں انتخابی جلسے سے خطاب کے دوران بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ حویلی کے عوام کا ایک ہی نعرہ ہے، کشمیر کا سودا نا منظور، بدقسمتی سے پاکستان کا وزیراعظم سلیکڈ اور نالائق ہے، یہ بزدل کشمیر پر بات بھی نہیں کرسکتا، کشمیر پر حملے کا جواب اپنے ہی نقشے میں تبدیلی سے دیا جاتاہے، یہ کہتے ہیں کشمیر ہائے وے کا نام سری نگر رکھ دیا جائے، یہ وہ وزیراعظم ہیں جو اسلام آباد میں بیٹھ مودی کی جیت کی دعا کرتے ہیں۔

چیئرمین پیپلز پارٹی نے مزید کہا کہ 25 جولائی کو کشمیری عوام کٹھ پُتلی کو جواب دیں گے، ہم دہلی اور اسلام آباد کی ڈکٹیشن بالکل نہیں مانتے، ہم کشمیری عوام کی ڈکٹیشن کے علاوہ کسی کی نہیں مانیں گے۔ پیپلز پارٹی ہی بھارت کی آنکھوں میں آںکھیں ڈال کر بات کرسکتی ہے، ہماری جماعت کبھی کشمیر کا سودا نہیں کر سکتی۔ ہم وہ وزیر اعظم نہیں چاہتے جو مودی کی جیت کی دعا کرے، یہ کیسے ہو سکتا ہے کہ خوشیاں مودی کے ساتھ مناؤ اور غم ہمارے ساتھ۔
بلاول بھٹو زرداری کا کہنا تھا کہ پیپلز پارٹی نے اپنے دورمیں ملازمین تنخواہوں میں اضافہ کیا، پیپلز پارٹی کے دور میں سب سے زیادہ روزگار ملا ، تبدیلی کا اصل چہرہ تاریخی غربت اور مہنگائی ہے، کشمیری عوام کو تبدیلی کی تباہی سے بچانا ہوگا،احساس احساس کہنے والوں میں کوئی احساس نہیں، آپ نے بےنظیر انکم سپورٹ پروگرام کا نام ہٹا کراحساس کردیا، بجٹ دستاویزات میں احساس پروگرام کا نام نہیں، نقل کے لیے عقل کی ضرورت ہوتی ہے، وزیراعظم ہماری خارجہ پالیسی کا کریڈٹ لیتے ہیں، امریکا کو ہوائی اڈے نہ دینے کی بات پیپلز پارٹی نے پارلیمنٹ میں کی تھی، پاکستان کا وزیراعظم نالائق ، نا اہل اور نا جائز ہے ، ہم سمجھتےہیں ہمارا وزیر اعظم ناکام رہا ہے۔
لاول بھٹو نے کہا ہے کہ پاکستان کا وزیراعظم سلیکٹڈ اور نالائق ہے، پاکستان کا وزیراعظم بزدل ہے جو کشمیر کیلئے بات نہیں کرسکتا، کشمیر پر حملہ ہو تو ہمارے وزیراعظم کا جواب ہوتا ہے ‘میں کیا کروں’۔

چیئرمین پیپلزپارٹی بلاول بھٹو نے حویلی آزاد کشمیر میں جلسے سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ بینظیر بھٹو کے نامکمل مشن کو مکمل کرنے آپ کے پاس آیا ہوں، پیپلز پارٹی کے خاتمے کی بات کرنیوالے یہاں عوام دیکھیں، پیپلزپارٹی کو کوئی ختم نہیں کرسکتا، کشمیری عوام نے 3 نسلوں سے ہمارا ساتھ دیا، قائد عوام نے ہمیں سکھایا تھا کشمیری بہن بھائیوں کیلئے ہزار سال بھی جنگ لڑنا پڑی لڑیں گے، کشمیریوں بھائیوں نے ایک دن کیلئے بھی شہید بی بی کا ساتھ نہیں چھوڑا۔

بلاول بھٹو کا کہنا تھا کہ ہم کشمیری عوام کے حکم پر چلیں گے، کسی کی ڈکٹیشن پر نہیں، ہم اسلام آباد اور دلی کی ڈکٹیشن نہیں مانتے، ہمارا وزیراعظم کشمیر کے معاملے میں ناکام رہا، بینظیر کہتی تھیں جہاں کشمیری کا پسینہ گرے گا وہاں میرا خون گرے گا، حویلی کے عوام کا ایک ہی نعرہ ہے، کشمیر کا سودا نامنظور۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں