202

سندھ حکومت کا دکانیں اور بازار کھولنے کیلیے منصوبہ تیار، وزیراعلیٰ کی اجازت سے مشروط

کراچی: سندھ میں دکانیں اور بازار کھولنے کے لیے صوبائی حکومت نے پلان ترتیب دے دیا اور ماہی گیری کی بھی مشروط اجازت دی دے گئی۔
ذرائع کے مطابق سندھ حکومت نے تاجر رہنماؤں کی مشاورت سے پلان مرتب کیا ہے جس میں کراچی کے تجارتی مراکز اوردکانیں کھولنے کے لیے 13 شعبوں کا تعین کیا گیا ہے، بنیادی طورپرکاروبار کی نوعیت کے لحاظ سے 13 سیکٹرز کو تین درجوں میں تقسیم کیا گیا، ہر درجے میں شامل شعبہ ہفتہ میں دو روز کے لیے کھولا جائے گا۔
پلان کے مطابق پہلے درجے میں چار، دوسرے میں چار اور تیسرے درجہ میں پانچ شعبے شامل ہیں، بازاراوردکانیں دن میں 8 گھنٹے کے لیے کھولے جائیں گے، کریانہ، مرغی و گوشت کی دکانیں اوربیکریاں ہفتے میں دو روز بند رکھنے کی تجویز سامنے آئی ہے صرف دودھ، سبزی پھل کی دکانوں اورمیڈیکل اسٹورزکو پورا ہفتہ کھولنے کی اجازت ہوگی۔
بازاراوردکانیں کھولنے کے لیے ایس او پی بدھ تک تیار کرلیا جائے گا، ایس او پی کی خلاف ورزی کرنے والے بازار سیل کردیئے جائیں گے، سندھ حکومت عید شاپنگ کے لئے 15 رمضان کے بعد مزید نرمی کرے گی عید شاپنگ کے لیے نرمی انتظامیہ سے تعاون اور ایس او پی پر عمل درآمد سے مشروط ہوگی۔
پبلک ٹرانسپورٹ کے لیے بھی جلد نرمی کا اعلان کیا جائے گا اور سندھ حکومت کے تمام ایس او پیز پر عمل کرنا لازمی ہوگا تاہم پلان پر عملدرآمد وزیراعلیٰ سندھ کی اجازت سے مشروط ہے۔
دوسری جانب محکمہ لائیو اسٹاک، فشریز نے مچھلیوں کے شکار پر پابندی میں نرمی کردی، ماہی گیر سمندر میں مچھلیوں کا شکار کرسکیں گے، ماہی گیر مروجہ ایس او پی کے تحت کراچی فش ہاربر پر سرگرمیاں شروع کرسکیں گے، فشنگ کی اجازت ملنے سے سندھ کے 3 لاکھ ماہی گیر خاندانوں کو فائدہ ہوگا

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں