65

اپوزیشن کی عید کے بعد حکومت کیخلاف نئے محاذ کی تیاری

لاہور، اپوزیشن جماعتوں نے عید الاضحیٰ کے بعد تحریک انصاف کی حکومت کے خلاف نئے محاذ کی تیاری شروع کردی۔چیئرمین پاکستان پیپلز پارٹی (پی پی پی) بلاول بھٹو زرداری اور مولانا فضل الرحمٰن کے درمیان لاہور کے ایک ہوٹل میں ملاقات ہوئی۔ اس ملاقات میں پیپلز پارٹی کے دیگر رہنما قمر زمان کائرہ اور چودھری منظور بھی شریک تھے۔
اپوزیشن رہنماؤں کی بیٹھک کٹھ پتلیوں پر لرزہ تاری کردیتی ہے: عظمی بخاری

ملاقات کے دوران دونوں رہنماؤں نے عید الاضحیٰ کے بعد ہونے والی اے پی سی پر مشاورت کی۔
میڈیا سے گفتگو میں چیئرمین پی پی بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ ملاقات میں اے پی سی کے معاملات پر بھی بات ہوئی، مڈ ٹرم الیکشن پر متحدہ اپوزیشن کے پلیٹ فارم پر فیصلہ ہو گا۔ بلاول بھٹو زرداری نے مزید کہا کہ اپوزیشن کو جلد از جلد عوام کے مسائل حل کرنے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ آج جو بات چیت ہوئی، اس کے اثرات انشااللّٰہ عید کے بعد نظر آنا شروع ہوجائیں گے۔ فضل الرحمان نے کہا کہ رہبر کمیٹی ایجنڈےکے طور پر تجاویز مرتب کرے گی، جس پر اے پی سی کا انعقاد ہوگا۔ انہوں نے کہا کہ پچھلے انتخابات میں عام آدمی کے ووٹ کا مینڈیٹ چوری کیا گیا، وہ واپس کیا جائے، دو برسوں میں حکومت کے اقدامات سے ریاست کی بقا کا سوال پیدا ہوگیا ہے۔ فضل الرحمان کا مزید کہنا تھا کہ عمران خان کے جانے کے بعد پہلی ترجیح ملکی معیشت کو اٹھانا ہوگا۔

واضح رہے کہ بلاول بھٹو زرداری پاکستان مسلم لیگ (ن) کے صدر شہباز شریف سے بھی ملاقات کریں گے۔
ن لیگ کی ترجمان مریم اورنگزیب کا کہنا ہے کہ ملاقات میں مہنگائی، بے روزگاری، عوامی مسائل پر اپوزیشن کے فیصلہ کن اقدام اور عید الاضحٰی کے بعد اے پی سی کے انعقاد پر مشاورت کی جائے گی۔
یاد رہے کہ ایک روز قبل مولانا فضل الرحمٰن اور اپوزیشن لیڈر شہباز شریف کی بھی ملاقات ہوئی تھی۔ دونوں رہنماؤں نے عید الاضحیٰ کے بعد اے پی سی سے متعلق مشاورت کی تھی۔ مولانا فضل الرحمٰن چاہتے تھے کہ شہباز شریف خود اس اے پی سی میں شرکت کریں، تاہم لیگی صدر نے اس شرکت کو اپنی صحت سے مشروط قرار دیا تھا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں