7

امریکی سفارتخانے نے وزیراعظم سے متعلق متنازع ٹوئٹ پر معافی مانگ لی

اسلام آباد: امریکی سفارتخانے نے مسلم لیگ ن کے رہنما احسن اقبال کا ٹویٹ شیئر کرنے پر معذرت کرلی جس میں بظاہر وزیراعظم عمران خان کے حوالے سے سیاسی بات کی گئی تھی۔

امریکی سفارت خانے نے ڈونلڈ ٹرمپ کی شکست پر احسن اقبال کے ٹوئٹ کو ری ٹویٹ کر دیا تھا۔ سوشل میڈیا صارفین نے امریکی سفارت خانے سے معافی مانگنے کا مطالبہ کیا تھا جس کے بعد امریکی سفارت خانے نے احسن اقبال کا ری ٹوئٹ اپنے ٹویٹر ہینڈل سے ہٹا دیا۔

امریکی سفارتخانہ نے بیان میں کہا کہ یوایس امبیسی کے ٹوئٹر ہینڈل تک گزشتہ شب غیر متعلقہ افواد کی جانب سے رسائی کی گئی، سفارت خانہ سیاسی پیغامات کو پوسٹ یا ری ٹوئٹ نہیں کرتا۔

امریکی سفارتخانہ نے وضاحتی ٹوئٹ میں کہا کہ اس غیر مجاز پوسٹ کے نتیجہ میں کسی قسم کی الجھن پیدا ہونے پر ہم معذرت خواہ ہیں۔

واضح رہے کہ احسن اقبال نے الیکشن میں ٹرمپ کی شکست پر امریکی اخبار واشنگٹن پوسٹ کا آرٹیکل بعنوان “ٹرمپ کی شکست دنیا کے آمروں کےلیے دھچکا” ٹوئٹ کراتے ہوئے وزیراعظم عمران خان کا نام لیے بغیر حوالہ دیا اور کہا تھا کہ ہمارے ہاں پاکستان میں بھی ایک شخص ہے، اور اسے بھی جلد باہر کا راستہ دکھایا جائے گا۔

وفاقی وزیر انسانی حقوق شیریں مزاری نے اس معاملے پر امریکی سفارت خانے کی جانب سے معافی کو ناکافی قرار دیا ہے۔

اپنے ٹوئٹ میں انہوں نے کہا کہ خاص طور پر اتنی تاخیر سے یہ (معافی) کافی نہیں۔ یہ بات واضح ہے کہ (سفارت خانے کا) اکاؤنٹ ہیک نہیں ہوا تھا تو کسی ’’غیر مجاز‘‘ شخص کو اس تک رسائی دی گئی۔ یہ قابل قبول نہیں کہ کوئی امریکی سفارت خانے میں کام کرتے ہوئے کسی سیاسی جماعت کا ایجنڈا آگے بڑھائے۔ ویزوں کے لیے جانچ پڑتال کرنے والے عملے سمیت اس کے سنگین نتائج ہوسکتے ہیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں